قرآن مجید کی فصاحت وبلاغت قسط نمبر 12

قرآن مجید اللہ کا کلام تھا یہ امت محمدیہ پر اللہ تعالیٰ کا احسان تھا کہ اس کا لازوال کلام ان کو دیا جارہا تھا اللہ سے عشق رکھنے والے کیسے اس سے متاثر نہ ہوتے کہ بقول شاعر ۔

دیدار گر نہ سہی گفتار ہی سہی

حسن وجمال یار کے آثار ہی سہی

سو قرآن مجید ان کے رگ وپے میں اترتا چلا گیا تیر پر تیر لگتے ہیں جسم لہولہان ہوجاتا ہے پر لذت قرآن میں فرق نہیں آتا حاکم وقت کوڑوں سے کھال ادھیڑ دیتا ہے پر قرآن پر عقیدہ متزلزل نہیں ہوتا خلیفہ وقت ہیں پر جان دیتے ہیں اس شان سے کہ قرآن ان کی زبان سے جدا نہیں ہوتا۔ عشق قرآن کی ایسی بے شمار مثالیں تاریخ کے اوراق پر بکھری ہوئی ہیں۔

 اھل عرب کا ذوق قرآن اس درجہ کو پہنچ گیا کہ ان میں ایسے لوگ پائے جانے لگے جن کی روزمرہ کی گفتگو قرآنی آیات کے ذریعے ہونے لگی ۔عربی ادب کی مشہور کتاب المستطرف میں اس بارے میں حضرت عبداللہ بن مبارک رح اورایک ایسی خاتون کا واقعہ لکھا ہے جو ہر بات کا جواب قرآن سے دیتی تھیں ۔

 

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ رح ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ

ﻣﯿﮟ ﺣﺞ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﷺ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺭﺕ ﮐﯽ ﻏﺮﺽ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ۔

ﻣﯿﮟ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﯾﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ۔

ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﮬﯿﺎ تھیں جنہوں ﻧﮯ ﺍﻭﻥ ﮐﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﺯﯾﺐ ﺗﻦ ﮐﯿﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ

( ﻏﺎﻟﺒﺎً ﻭﮦ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺑﮭﭩﮏ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﺳﮯ ﺑﭽﮭﮍ ﮔﺌﯽ تھیں )

تو میں نے آگے بڑھ کر سلام کیا تو درج ذیل گفتگو ہوئی ۔

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻋﻠﯿﮑﻢ ﻭﺭﺣﻤۃ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺑﺮﮐﺎﺗﮧ

 

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺳَﻼَﻡٌ ﻗَﻮْﻻً ﻣِﻦ ﺭَّﺏٍّ ﺭَّﺣِﻴﻢٍ

ﯾﻌﻨﯽ ﺳﻼﻡ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﻣﮩﺮﺑﺎﻥ ﺭﺏ ﮐﺎ ﻗﻮﻝ ﮨﮯ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺳﻼﻡ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﮨﮯ۔

عبداللہ بن مبارک : آپ یہاں کیا کر رہی ہیں؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻣَﻦ ﻳُﻀْﻠِﻞِ ﺍﻟﻠَّﻪُ ﻓَﻠَﺎ ﻫَﺎﺩِﻱَ ﻟَﻪُ ۔

ﺟﺴﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﮭﭩﮑﺎ ﺩﮮ ﺍﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﮦ ﭘﺮ ﻻﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻧﮩﯿﮟ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﮞ۔

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺁﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺳُﺒْﺤَﺎﻥَ ﺍﻟَّﺬِﻱ ﺃَﺳْﺮَﻯ ﺑِﻌَﺒْﺪِﻩِ ﻟَﻴْﻠًﺎ ﻣِﻦَ ﺍﻟْﻤَﺴْﺠِﺪِ ﺍﻟْﺤَﺮَﺍﻡِ ﺇِﻟَﻰ ﺍﻟْﻤَﺴْﺠِﺪِ ﺍﻟْﺄَﻗْﺼَﻰ۔

ﭘﺎﮎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﻣﺴﺠﺪ ﺣﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﻣﺴﺠﺪ ﺍﻗﺼﯽ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﺠﺪ ﺍﻗﺼﯽ ﺳﮯ ﺁﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺐ ﺳﮯ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺛَﻼﺙَ ﻟَﻴَﺎﻝٍ ﺳَﻮِﻳًّﺎ ۔ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﺗﯿﻦ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : آپ کے ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮨﮯ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﻟَّﺬﻱ ﻫُﻮَ ﻳُﻄْﻌِﻤُﻨﻲ ﻭَ ﻳَﺴْﻘﻴﻦِ ۔ ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮭﻼﺗﺎ ﭘﻼﺗﺎ ﮨﮯ ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﺳﮯ ﺭﺯﻕ ﻣﮩﯿﺎ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﯿﺎ ﻭﺿﻮ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ؟

ﺧﺎﺗﻮﻥ : ﻓَﻠَﻢْ ﺗَﺠِﺪُﻭﺍ ﻣَﺎﺀً ﻓَﺘَﻴَﻤَّﻤُﻮﺍ ﺻَﻌِﻴﺪًﺍ ﻃَﻴِّﺒًﺎ ۔

ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮧ ﭘﺎؤ ﺗﻮ ﭘﺎﮎ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ ﺗﯿﻤﻢ ﮐﺮﻭ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﮐﮧ ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻞ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﺳﻮ ﺗﯿﻤﻢ ﮐﺮﻟﯿﺘﯽ ﮨﻮﮞ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﯾﮧ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﮯ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺠﺌﮯ۔

ﺧﺎﺗﻮﻥ : ﺃَﺗِﻤُّﻮﺍ ﺍﻟﺼِّﻴَﺎﻡَ ﺇِﻟَﻰ ﺍﻟﻠَّﻴْﻞِ۔ ﺭﻭﺯﮮ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺁﻏﺎﺯ ﺗﮏ ﭘﻮﺭﮮ ﮐﺮﻭ۔

ﻣﺮﺍﺩ ﯾﮧ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯﮮ ﺳﮯ ﮨﻮﮞ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﯾﮧ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﮩﯿﻨﮧ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﻦ ﺗَﻄَﻮَّﻉَ ﺧَﻴﺮًﺍ ﻓَﺈِﻥَّ ﺍﻟﻠَّﻪَ ﺷﺎﻛِﺮٌ ﻋَﻠﻴﻢٌ۔

ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﮯ ﺗﻮ ﺑﯿﺸﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺷﺎﮐﺮ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﯿﻢ ﮨﮯ۔

ﯾﻌﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻧﻔﻠﯽ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻟﯿﮑﻦ ﺳﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﻭﺯﮦ ﺍﻓﻄﺎﺭ ﮐﺮﻟﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮨﮯ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍَﻥْ ﺗَﺼُﻮْﻣُﻮْﺍ ﺧَﯿْﺮٌﻟَّﮑُﻢْ، ﺍِﻥْ ﮐُﻨْﺘُﻢْ ﺗَﻌْﻠَﻤُﻮْﻥَ۔

ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻮ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﮯ ، ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﺟﺎﻧﻮ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺁﭖ ﻣﯿﺮﮮ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﯾﮟ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻣَﺎ ﻳَﻠْﻔِﻆُ ﻣِﻦْ ﻗَﻮْﻝٍ ﺇِﻟَّﺎ ﻟَﺪَﻳْﻪِ ﺭَﻗِﻴﺐٌ ﻋَﺘِﻴﺪٌ ۔

ﻭﮦ ﮐﻮﺉِ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺘﻌﺪ ﻧﮕﮩﺒﺎﻥ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔

ﯾﻌﻨﯽ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﮨﺮ ﻟﻔﻆ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﻓﺮﺷﺘﮧ ﻧﮕﮩﺒﺎﻧﯽ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺭﺍﺝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ

ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺑﺮ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﺍﺣﺘﯿﺎﻁ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮﮞ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﺲ ﻗﺒﯿﻠﮧ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻻ ﺗَﻘْﻒُ ﻣَﺎ ﻟَﻴْﺲَ ﻟَﻚَ ﺑِﻪِ ﻋِﻠْﻢٌ ﺇِﻥَّ ﺍﻟﺴَّﻤْﻊَ ﻭَﺍﻟْﺒَﺼَﺮَ ﻭَﺍﻟْﻔُﺆَﺍﺩَ ﻛُﻞُّ ﺃُﻭْﻟَﺌِﻚَ ﻛَﺎﻥَ ﻋَﻨْﻪُ ﻣَﺴْﺌُﻮﻟًﺎ۔

ﺟﻮ ﺑﺎﺕ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﺭﭘﮯ ﻧﮧ ﮨﻮ۔

ﺑﯿﺸﮏ ﮐﺎﻥ، ﺁﻧﮑﮫ ﺍﻭﺭ ﺩﻝ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﺑﺪﮦ ﮨﯿﮟ۔

ﯾﻌﻨﯽ ﺟﺲ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﮐﺎ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﭽﮫ ﻋﻠﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻧﮧ ﮐﭽﮫ ﻭﺍﺳﻄﮧ ﮨﮯ،

ﺍﺳﮯ ﭘﻮﭼﮫ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﺗﻮﮞ ﮐﻮ کیوںﺿﺎﺋﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﯾﮟ ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻟَﺎ ﺗَﺜْﺮِﻳﺐَ ﻋَﻠَﻴْﻜُﻢُ ﺍﻟْﻴَﻮْﻡَ ۖ ﻳَﻐْﻔِﺮُ ﺍﻟﻠَّﻪُ ﻟَﻜُﻢْ ۔

ﺁﺝ ﺗﻢ ﭘﺮ ﮐﻮﺉِ ﻣﻼﻣﺖ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﻟﻠﮧ تعالیﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﺨﺶ ﺩﮮ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﺳﮯ ﺟﺎ ﻣﻠﻨﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﺗَﻔْﻌَﻠُﻮﺍ ﻣِﻦْ ﺧَﻴْﺮٍ ﻳَﻌْﻠَﻤْﻪُ ﺍﻟﻠَّﻪُ۔

ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺟﻮ ﻧﯿﮑﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺍﻟﻠﮧ ﺍﺳﮯ ﺟﺎنتا ﮨﮯ۔

ﯾﻌﻨﯽ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺣﺴﻦ ﺳﻠﻮﮎ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺟﺮ ﺩﮮ ﮔﺎ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯼ

( ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺳﻮﺍ ﺭ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ )

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻗُﻞ ﻟِّﻠْﻤُﺆْﻣِﻨِﻴﻦَ ﻳَﻐُﻀُّﻮﺍ ﻣِﻦْ ﺃَﺑْﺼَﺎﺭِﻫِﻢْ۔

ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺳﮯﮐﮩﮧ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﮕﺎ ﮨﯿﮟ ﻧﯿﭽﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ۔

——————–

 

ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍٓﻧﮑﮭﯿﮟ ﭘﮭﯿﺮ ﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ آپ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺟﺎئیں

ﺟﺐ ﻭﮦ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﻮ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﺑﺪﮎ ﺍﭨﮭﯽ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮭﭧ ﮔﺌﮯ

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﺃَﺻَﺎﺑَﻜُﻢْ ﻣِﻦْ ﻣُﺼِﻴﺒَﺔٍ ﻓَﺒِﻤَﺎ ﻛَﺴَﺒَﺖْ ﺃَﻳْﺪِﻳﻜُﻢْ

ﺗﻢ ﮐﻮ ﺟﻮ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﭘﮩﻨﭽﺘﯽ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺍﭘﻨﮯ ہی ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮨﮯ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﮐﻮ ﺍﻣﺪﺍﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮩﺎ ﺟﺴﮯ ﻭﮦ ﺑﺨﻮﺑﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﻮ ﮐﻨﭩﺮﻭﻝ ﮐﺮﯾﮟ ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺍٓﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺳﻮﺍ ﺭ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : آپ ﺻﺒﺮ ﮐﺮیں ﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﺎ ﮔﮭﭩﻨﺎ ﺑﺎﻧﺪﮬﻮﮞ

( ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎؒ ﮐﯽ ﺫﮨﺎﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﺩﺍﺩ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ )

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻓَﻔَﻬَّﻤْﻨَﺎﻫَﺎ ﺳُﻠَﻴْﻤَﺎﻥَ۔ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﻭﮦ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺳﻤﺠﮭﺎﺩﯾﺎ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍٓﭖ ﺑﮩﺖ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﺎ ﭘﺎﺅﮞ ﺑﺎﻧﺪﮬﺎ ﺍﻭﺭ  ﺍﺳﮯ ﮐﮩﺎ آپ سوارﮨﻮﺟﺎئیں۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﯾﮧ ﺍٓﯾﺖ ﭘﮍﮬﯽ :

ﺳُﺒْﺤَﺎﻥَ ﺍﻟَّﺬِﻱ ﺳَﺨَّﺮَ ﻟَﻨَﺎ ﻫَٰﺬَﺍ ﻭَﻣَﺎ ﻛُﻨَّﺎ ﻟَﻪُ ﻣُﻘْﺮِﻧِﻴﻦَ ﻭَﺇِﻧَّﺎ ﺇِﻟَﻰٰ ﺭَﺑِّﻨَﺎ ﻟَﻤُﻨﻘَﻠِﺒُﻮﻥَ۔

( ﯾﻌﻨﯽ ﺳﻮﺍﺭﯼ ﭘﺮ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺩﻋﺎ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﭘﮍﮬﯽ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻭﻧﭩﻨﯽ ﮐﯽ ﻣﮩﺎﺭ ﭘﮑﮍﯼ

ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ حدی پڑھنے لگا

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﻭﻧﭧ ﮐﻮ ﭼﻼﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﻮ اشعار وغیرہ پڑھے جاتے ہیں)

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﻗْﺼِﺪْ ﻓِﻲ ﻣَﺸْﻴِﻚَ ﻭَﺍﻏْﻀُﺾْ ﻣِﻦْ ﺻَﻮْﺗِﻚَ ۔

ﺍﭘﻨﯽ ﭼﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺎﻧﮧ ﺭﻭﯼ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺍٓﻭﺍﺯ ﺩﮬﯿﻤﯽ ﺭﮐﮭﻮ۔

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﺍٓﮨﺴﺖ ﺍٓﮨﺴﺘﮧ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ دیگراشعار ﭘﮍﮬﻨﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺌﮯ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻓَﺎﻗْﺮَﺀُﻭﺍ ﻣَﺎ ﺗَﻴَﺴَّﺮَ ﻣِﻦَ ﺍﻟْﻘُﺮْﺁﻥِ ۔ ﭘﺲ ﻗﺮﺍٓﻥ ﭘﮍﮬﻮ ﻗﺮﺍٓﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯﺟﺘﻨﺎ ﺍٓﺳﺎﻥ ﮨﻮ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺷﻌﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻗﺮﺍٓﻥ ﭘﮍﮬﻮ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﮭﻼﺋﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻣَﺎ ﻳَﺬَّﻛَّﺮُ ﺇِﻟَّﺎ ﺃُﻭﻟُﻮ ﺍﻟْﺄَﻟْﺒَﺎﺏِ۔

 ﻧﮩﯿﮟ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﭘﮑﮍﺗﮯ ﻣﮕﺮ ﻋﻘﻞ ﻭﺍﻟﮯ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍٓﭖ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﺫﮨﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭ ﮨﯿﮟ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺳﺎ ﺍٓﮔﮯ ﭼﻼ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﯿﺮﺍ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﮨﮯ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻳَﺎ ﺃَﻳُّﻬَﺎ ﺍﻟَّﺬِﻳﻦَ ﺁﻣَﻨُﻮﺍْ ﻻَ ﺗَﺴْﺄَﻟُﻮﺍْ ﻋَﻦْ ﺃَﺷْﻴَﺎﺀ ﺇِﻥ ﺗُﺒْﺪَ ﻟَﻜُﻢْ ﺗَﺴُﺆْﻛُﻢْ۔

ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ ﺍﻥ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﻝ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ

ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﭘﺮ ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺮﺩﯼ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮨﻮ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺧﺎﻭﻧﺪ ﺯﻧﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ نے ﻗﺎﻓﻠﮧ ﮐﻮ ﭘﺎ ﻟﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﮨﮯ۔ آپ کا ﻗﺎﻓﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮨﮯ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﺍﻟْﻤَﺎﻝُ ﻭَﺍﻟْﺒَﻨُﻮﻥَ ﺯِﻳﻨَﺔُ ﺍﻟْﺤَﻴَﺎﺓِ ﺍﻟﺪُّﻧْﻴَﺎ

ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻﺩ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺯﯾﻨﺖ ﮨﯿﮟ

( ﯾﻌﻨﯽ ﻗﺎﻓﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﮨﮯ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﻋﻼﻣﺎﺕٍ ﻭَ ﺑﺎﻟﻨَّﺠﻢِ ﻫﻢ ﻳَﻬﺘﺪﻭﻥَ۔

ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﻧﺸﺎﻧﯿﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﺘﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ وہ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺮتے ﮨﯿﮟ

( ﯾﻌﻨﯽ ﻭﮦ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﮐﮯ ﺭﮨﺒﺮ ﯾﺎ ﮔﺎﺋﯿﮉ ﮨﯿﮟ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﻤﺎﺭﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺧﯿﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﯾﮧ ﺧﯿﻤﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻥ ﮨﯿﮟ۔

( ﯾﻌﻨﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮨﯿﮟ؟ ﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﻼﺅﮞ )

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻭَﺍﺗّﺨﺬ ﺍﻟﻠﮧُ ﺍِﺑﺮﺍﮬﯿﻢَ ﺧﻠﯿﻼً۔ ﻭﮐﻠَّﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﻮﺳٰﯽ ﺗﮑﻠﯿﻤﺎً۔ ﯾﺎ ﯾحییﺧﺬِﺍﻟﮑﺘﺎﺏ ﺑﻘﻮۃٍ۔

ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺖ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻣﻮﺳٰﯽؑ ﺳﮯﮐﻼﻡ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﮮ ﯾﺤﯽٰ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﻮ ﻗﻮﺕ ﺳﮯ ﭘﮑﮍﻭ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ، ﻣﻮﺳﯽٰ، ﯾﺤﯽٰ تھے)

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍٓﻭﺍﺯ ﺩﯼ ﺍﮮ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ، ﺍﮮ ﻣﻮﺳﯽٰ، ﺍﮮ ﯾﺤﯽ،

تو ﭼﺎﻧﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ روشن چہرے والے تین ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﺮﺍٓﻣﺪ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﮭﺮ ﺟﺐ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺗﻮ ۔۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﻓَﺎﺑﻌﺜُﻮ ﺍَﺣَﺪَﮐُﻢ ﺑِﻮَﺭِﻗﮑﻢ ﮬٰﺬﮦٖ ﺍِﻟﯽ ﺍﻟﻤﺪِﯾﻨَۃِ ﻓَﻠﯿﻨﻈﺮ ﺍَﯾﮩﺎ ﺍﺯﮐٰﯽ ﻃﻌﺎﻣﺎً ﻓﻠﯿﺄﺗﮑﻢ ﺑﺮﺯﻕٍ ﻣﻨﮧُ۔

خود میں سے ﺍﯾﮏ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﮑﮧ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﺑﮭﯿﺠﻮ

ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﻧﺴﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ پاکیزہ (اچھا )ﮨﮯ۔

( ﯾﻌﻨﯽ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻮ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﻻﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﺩﯾﺎ )

ﺗﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻟﮍﮐﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺧﺮﯾﺪﺍ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ۔

ﺑﮍﮬﯿﺎ : ﻛُﻠُﻮﺍ ﻭَﺍﺷْﺮَﺑُﻮﺍ ﻫَﻨِﻴﺌًﺎ ﺑِﻤَﺎ ﺃَﺳْﻠَﻔْﺘُﻢْ ﻓِﻲ ﺍﻷﻳَّﺎﻡِ ﺍﻟْﺨَﺎﻟِﻴَﺔِ۔

ﮨﻨﺴﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮭﺎﺅ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﺑﺪﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮔﺰﺷﺘﮧ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ

( ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺎ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﻧﻮﺍﺯﯼ قبولﮐﯽ )

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ( ﺍﺱ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﮯ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ )

ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺗﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻧﮧ ﺑﺘﺎﺅ

ﺗﻮ ﺍﺱ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﮯ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺘﻼﯾﺎ

ﮐﮧ ﯾﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻭﺍﻟﺪﮦ ہیں ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ سے ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ

ﺍﺱ ﺧﻮﻑ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻠﻂ ﺑﺎﺕ ﻧﮧ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﮯ

ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ﭘﺲ ﭘﺎﮎ ہے ﻭﮦ ﺫﺍﺕ ﺟﻮ ہر چیز پر قادر ہے۔

——————–

 

ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻦ ﻣﺒﺎﺭﮎ : ﺫَﻟِﻚَ ﻓَﻀْﻞُ ﺍﻟﻠَّﻪِ ﻳُﺆْﺗِﻴﻪِ ﻣَﻦ ﻳَﺸَﺎﺀ ﻭَﺍﻟﻠَّﻪُ ﺫُﻭ ﺍﻟْﻔَﻀْﻞِ ﺍﻟْﻌَﻈِﻴﻢِ۔

ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﻓﻀﻞ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﺲ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﮯ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺑﮍﮮ ﻓﻀﻞ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ۔

یہ اس امت کی ایک خاتون کا قصہ تھا ایسے بہت سے واقعات جن سے قرآن مجید سے عشق ٹپکتا ہو اس امت کی تاریخ میں موجود ہیں اور کیوں نہ ہوتے کہ یہ اس اللہ کا بے مثال کلام ہے جو حقیقی مرجع حمد وعشق ہے۔اللہ تعالی ہمیں بھی عشق قرآن وصاحب قرآن نصیب فرمائے آمین ۔

 

جاری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


قرآن مجید کی فصاحت وبلاغت

قرآن مجید کے اس چیلنج کا تذکرہ جو اللہ تعالیٰ نے اس قوم کو دیا تھا جن کو اپنی زبان دانی اور قوت کلام پر ناز تھا جن کے ہاں شعروادب ہی بزرگی وفضیلت کا معیار تھا ۔
عربی زبان کی فصاحت وبلاغت اہل عرب کی زباندانی ،عرب معاشرے پر شعراء کے اثرات ،اور اس کے تناظر میں قرآن مجید کے اس چیلنج کا دلچسپ قسط وار تذکرہ۔

کل مضامین : 16
اس سلسلے کے تمام مضامین

مفتی عبد اللہ اسلم صاحب

مدیر مدرسہ مصباح العلوم لاہور ۔
کل مواد : 20
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019

تبصرے

يجب أن تكون عضوا لدينا لتتمكن من التعليق

إنشاء حساب

يستغرق التسجيل بضع ثوان فقط

سجل حسابا جديدا

تسجيل الدخول

تملك حسابا مسجّلا بالفعل؟

سجل دخولك الآن
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019