تدوینِ قرآن اور ترتیبِ خلافت

خلفاء راشدین مہدیین کی ترتیب خلافت اجماعی ہونے کے ساتھ ساتھ منطقی اور معقولی بھی ہے۔ قرآن کریم جو انسانوں کے لیے تاقیام قیامت سرچشمۂ ہدایت ہے، اس کی حفاظت کے لیے رب ذوالجلال نے غیب سے انتظامات فرماۓ ہیں۔ جوں جوں حلقۂ اسلام وسیع ہوتا گیا، اس کے تقاضوں کے مطابق خلفاء راشدین کو تکوینی طور پہ ان ضرورتوں کو پایۂ تکمیل تک پہنچانے کی رہنمائی اور سہولت بہم پہنچائی جاتی رہی۔ اس زاویے سے غور کرنے سے اس شیطانی وسوسے و فساد عقیدہ کی جڑ کٹ جاتی ہے کہ خدانخواستہ صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین نے دنیاوی مفادات کے خاطر ساز باز کر کے ساداتِ اہلِ بیت کو ان کے حق خلافت بلا فصل سے محروم رکھا۔

قرآن سے صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم کا شغف

[مولانا ضیاءالحق خیر آبادی عرف حاجی بابو،استاذ مدرسہ تحفیظ القرآن سکھٹی،مبارک پور، اعظم گڑھ،مدیر مجلہ رشد وہدایت،اعظم گڈھ۔1998ء میں دارالعلوم دیوبند سے فراغت کے بعد 2013ء تک مدرسہ شیخ الاسلام شیخوپور،اعظم گڑھ میں مدرس اوربارہ سال تک ماہنامہ ضیاءالاسلام ،اعظم گڑھ کے مدیر رہے ۔علمی و ادبی حلقے میں نمایاں مقام حاصل ہے۔ مولانا سید محمد میاںؒ سیمینار میں پیش کئے گئے،بارہ سو صفحات پر مشتمل مقالات و مضامین کو” تذکرہ سید الملت“کے نام سے شائع کرنا،آپ کا یادگار کارنامہ ہے۔ ادارہ]
ماہنامہ النخیل رمضان 1440
  • کل مضامین : 21
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2022