علم المنطق کا خلاصۃ

علم کی دو اقسام ہیں
1 تصور
2 تصدیق

تصور کی دو اقسام ہیں
1 تصور بدیہی
2 تصور نظری

تصور کی طرح تصدیق کی بھی دو اقسام ہیں
1 تصدیق بدیہی
2 تصدیق نظری

دلالت ( دالّ ، مدلول ) و وضع ( موضوع ، موضوع لہٗ )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دلالت کی دو اقسام ہیں
1 دلالتِ لفظیہ
2 دلالتِ غیر لفظیہ

دلالت ِ لفظیہ کی تین اقسام ہیں
1 دلالتِ لفظیہ وضعیہ
2 دلالتِ لفظیہ طبعیہ
3 دلالتِ لفظیہ عقلیہ

دلالتِ غیر لفظیہ کی اقسام بھی تین ہیں
1 غیر لفظیہ وضعیہ
2 غیر لفظیہ طبعیہ
3 غیر لفظیہ عقلیہ

دلالتِ لفظیہ کی اقسام میں سے دلالتِ لفظیہ وضعیہ کی بھی تین اقسام ہیں
1 دلالتِ مطابقت
2 دلالتِ تضمن
3 دلالتِ التزام

مفہوم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مفہوم کی اقسام دو ہیں
1 کلّی
2 جزٸی

کلی کی دو اقسام ہیں
1 کلی ذاتی
2 کلی عرضی

کلی ذاتی کی اقسام تین ہیں
1 جنس
2 نوع
3 فصل

جنس کی دو اقسام ہیں
1 جنس قریب
2 جنس بعید

فصل کی بھی دو اقسام ہیں
1 فصل قریب
2 فصل بعید

کلی عرضی کی اقسام دو ہیں
1 خاصہ
2 عرض عام

دو کلیوں کے مابین نسبت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو کلیوں کے درمیان چارطرح کی نسبت ہو سکتی ہی
1 نسبت تساوی
2 نسبت تباین
3 نسبت عموم و خصوص مطلق
4 نسبت عموم و خصوص من وجہ

معرف کی اقسام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

معرف کی چار اقسام ہیں
1 حدّ تام
2 حد ناقص
3 رسم تام
4 رسم ناقص

حجت اور دلیل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو یا زیادہ معلوم تصدیقات کا مجموعہ جس سے کچھ معلوم ہو

قضیہ اور اس کی اقسام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قضیہ کی دو اقسام ہیں
1 قضیہ حملیہ( موجبہ ، سالبہ )
2 قضیہ شرطیہ

قضیہ حملیہ کی چار اقسام ہیں
1 قضیہ مخصوصہ
2 قضیہ طبعیہ
3 قضیہ محصورہ
4 قضیہ مہملہ

قضیہ محصورہ کی درج ذیل چار اقسام ہیں
1 موجبہ کلیہ
2 موجبہ جزٸیہ
3 سالبہ کلیہ
4 سالبہ جزٸیہ

اوپر قضیہ کی دو اقسام بیان کی تھیں
قضیہ حملیہ اور قضیہ شرطیہ
قضیہ حملیہ کی اقسام اور ان کی ذیلی اقسام کے بعد آتے ہیں قضیہ شرطیہ کی طرف
قضیہ شرطیہ کی درج ذیل دو اقسام ہیں
1 قضیہ شرطیہ متصلہ
2 قضیہ شرطیہ منفصلہ

آگے شرطیہ متصلہ کی دو ذیلی اقسام ہیں
1 متصلہ لزومیہ
2 متصلہ اتفاقیہ

اسی طرح قضیہ شرطیہ منفصلہ کی بھی دو ذیلی اقسام ہیں
1 منفصلہ عنادیہ
2 منفصلہ اتفاقیہ

قضیہ شرطیہ منفصلہ کی مزید تین ذیلی اقسام ہیں جو جداٸی اور انفصال کی نوعیت کے اعتبار سے ہیں
1 شرطیہ منفصلہ حقیقیہ
2 شرطیہ منفصلہ مانعة الجمع
3 شرطیہ منفصلہ مانعة الخلو

تناقض
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو قضیوں میں تناقض تب ہو گا جب وہ دونوں درج ذیل آٹھ چیزوں میں متفق ہوں
1 موضوع
2 محمول
3 زمان
4 مکان
5 قوت و فعل
6 شرط
7 کل اور جز۶
8 اضافت

حجت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حجت کی اقسام تین ہیں جو کہ درج ذیل ہیں
1 قیاس
2 استقرا۶
3 تمثیل

قیاس کی دو اقسام ہیں
1 قیاس استثناٸی
2 قیاس اقترانی

قیاس کی مادہ کے اعتبار سے پانچ اقسام ہیں جو کہ درج ذیل ہیں
1 برہانی قیاس
2 جدلی قیاس
3 خطابی قیاس
4 شعری قیاس
5 سفسطی قیاس

بدیہیات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بدیہیات کی درج ذیل چھ اقسام ہیں
1 بدیہیات اولیات
2 بدیہیات فطریات
3 بدیہیات حدسیات
4 بدیہیات مشاہدات
5 بدیہیات تجربیات
6 بدیہیات متواترات

منطق کی یہ مشہور اصطلاحات ، ان کی تعریفات اور توضیحات و تفصیلات اگر ذہن نشین ہوں تو دورانِ کتب بینی منطقی استدلالات کی صحت و سقم کو پرکھنا زیادہ دشوار نہیں ہوتا

تبصرے

يجب أن تكون عضوا لدينا لتتمكن من التعليق

إنشاء حساب

يستغرق التسجيل بضع ثوان فقط

سجل حسابا جديدا

تسجيل الدخول

تملك حسابا مسجّلا بالفعل؟

سجل دخولك الآن
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019