ایک بے زبان مظلوم کی نوائے درد !

میں ایک بے زبان ستم رسیدہ ہوں ، جس کو چالیس سال سے سفاک دشمنوں نے قید کر رکھا ہے ، میری تاریخ بہت قدیم ہے ، کہا جاتا ہے کہ ڈھائی ہزار سال قبل مسیح ، کنعانی خانہ بدوش میری آغوش میں فروکش ہوئے ، اس کے بعد سے میں ہمیشہ ہی لٹتی اور بستی رہی ، میری عظمتوں کے کیا کہنے ! کہ یہیں قافلۂ نبوت کے سرخیل حضرت ابراہیم علیہ السلام نے عراق سے آکر اپنا رخت سفر کھولا اور اپنے ایک صاحبزادے حضرت اسحاق علیہ السلام کو میری گود میں بسایا ، پھر ان کے بیٹے یعقوب اور حضرت یعقوب کے بیٹے حضرت یوسف یہیں پیدا ہوئے اور پروان چڑھے ، میرے ہی سینۂ گیتی پر داؤد و سلیمان کا تخت اقتدار قائم ہوا اور انھوںنے عدل و انصاف سے دنیائے انسانیت کو معمور کردیا ، موسیٰ و ہارون ، طالوت وسموئیل ، زکریا و یحییٰ اور عیسیٰ — علیہم السلام — اور کتنے ہی پیغمبروں نے مجھ ہی کو اپنی دعوت و تبلیغ کا مرکز بنایا ، یہیں سے دُور دُور تک ہدایت کی روشنی پہنچی اور بندوں کا ان کے رب سے رشتہ استوار کرنے کی کوشش کی گئی ، پھر مجھے ہی یہ شرف حاصل ہوا کہ آخری پیغمبر حضرت محمد مصطفی ا نے یہاں سے گذر کر سفر آسمانی طے کیا اور بارگاہ ربانی میں پہنچے ۔
تم سمجھ گئے ہوگے کہ میں کون ہوں اور یہ کس مظلوم کی فغانِ درد ہے ؟ میں قدس ہو ، وہی عظیم شہر جس کو مسلمان ’ بیت المقدس ‘ کہتے ہیں اورجس کا نام اللہ کے نبی حضرت داؤد علیہ السلام نے یروشلم (Jerusalem) رکھا تھا ، شاید تم نے میری مقدس نسبتوں کو بھلادیا ، تو سنو ! کہ میرے بارے میں مقاتل سلیمان جیسے شارح قرآن ، محدث اور فقیہ نے کہا تھا :
اس شہر کا کوئی چپہ ایسا نہیں ، جس پر کسی نبی مرسل نے نماز نہ پڑھی ہو ، یا مَلِک مُقَرَّب نے قیام نہ کیا ہو ، حضرت زکریا علیہ السلام کی دُعا اللہ پاک نے بیت المقدس ہی میں قبول فرماکر انھیں حضرت یحییٰ کے تولد کی بشارت دی ، انبیائے کرام علیہم السلام نے بیت المقدس ہی میں اللہ کے تقرب کے لئے نذر و نیاز پیش کی ، بیت المقدس ہی میں حضرت مریم علیہا السلام کو بہ حکم خداوندی جاڑے کے پھل گرمی میں اور گرمی کے پھل جاڑے میں نصیب ہوئے ، یہیں حضرت عیسیٰ بن مریم کی پیدائش ہوئی اور گود میں تکلم فرمایا ، یہیں سے اللہ نے انھیں آسمان پر اُٹھایا ، یہیں ان پر آسمان سے مائدہ ( کھانے سے سجا ہوا دسترخوان) نازل ہوا ، بیت المقدس ہی تک ( شب اسراء و معراج میں ) نبی کریم اکو لانے کے لئے اللہ نے آپ کے لئے براق کا انتظام فرمایا تھا ۔ ( مولانا نور عالم خلیل امینی : فلسطین کسی صلاح الدین کے انتظار میں : ۱۳ ، بحوالہ الانس الجلیل بتاریخ القدس والخلیل)
پھر تاریخ انسانی کے عادل ترین حکمرانوں میں سے ایک ، مرد مؤمن اور صحابی رسول حضرت عمر فاروقؓ نے ۱۵ھ م ۶۳۶ء کو مجھے ان لوگوں کے ہاتھوں سے آزاد کرایا ، جو اپنے آپ کو حضرت عیسیٰ کا پیروکار قرار دیتے تھے ؛ لیکن انھوںنے توحید کو چھوڑ کر تثلیث کو اختیار کرلیا تھا ، پھر تو ہمیں دنیا کی سب سے مقدس و محترم جگہ ہونے کا شرف حاصل ہوگیا ، بڑے بڑے صحابۂ و تابعین نے اپنے قیام کے لئے میرا انتخاب کیا اور نابغۂ روزگار محدثین و فقہاء اور علوم اسلامی کے بحر ناپید اکنار کے غواص علماء یہاں پیدا ہوئے اور یہیں سے ان کے علم کا فیض جاری ہوا ۔
اس کے بعد ۶۳۵ء سے ۱۹۱۷ء یعنی بارہ سو سال تک میری تاریخ کا روشن اور تابناک دور رہا ، جب میں پوری دنیا کے توحید کے متوالوں کا مرجع تھا ، حجاج کی بڑی تعداد مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں عبادت انجام دینے کے بعد میرا رُخ کرتی تھی ، اور سر کے بل چل کر پہنچتی اور قدم بوس ہوا کرتی تھی ، یہاں علوم اسلامی کی کتنی مسند ِدرس بچھی ہوئی تھیں ، عربی زبان اس خطے کی اصل زبان تھی اور عربی و اسلامی تہذیب نے ہمیں اپنے ثقافتی ورثہ سے مالا مال کردیا تھا ؛ لیکن پھر ایسا ہوا کہ یورپ میں مسلمانوں کی بڑھتی ہوئی پیش قدمی کے ردعمل میں وہاں مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلائی گئی اور عیسائیوں کے مذہبی جذبات کو اُبھار کر صلیبی جنگ شروع ہوئی ، اس جنگ میں پورا یورپ اور پوری عیسائی دنیا متحد تھی ، آخر جولائی ۱۰۹۹ء میں صلیبی فوجیں مجھ پر قابض ہوگئیں اور میری پیشانی پر صلیب نصب کر دی گئی ، یا تو مسلمانوں کے خلیفہ دوم حضرت عمر فاروقؓ نے اس طرح ہمیں فتح کیا تھا کہ خون کا ایک قطرہ بھی نہیں بہا ، عیسائیوں اور یہودیوں کو پوری پوری امان دی گئی اور ان کی عبادت گاہوں کو کسی نے ہاتھ تک نہیں لگایا ، یا صلیبی دہشت گردوں نے یہاں ایسا قتل عام کیا کہ بچوں ، بوڑھوں اور عورتوں تک کو نہیں بخشا گیا ، آٹھ روز تک قتل عام ہوتا رہا اور تقریباً ساٹھ ، ستر ہزار افراد قتل کردیئے گئے ، جن کی لاشیں پورے شہر میں بکھری ہوئی تھیں ، جب میرے احاطہ میں جس کو وہ ’ سلیمان کا معبد ‘ کہتے تھے ، وہ داخل ہوئے تو ان کے گھوڑوں کے گھٹنوں تک مسلمانوں کا خون بہہ رہا تھا ۔
اس وقت مسلمانوں میں غیرت تھی اور مسلمان حکمرانوں کی نظر میں اپنے اقتدار سے زیادہ اسلام کی سربلندی کی اہمیت تھی ؛ چنانچہ عماد الدین زنگی اور نور الدین زندگی جیسے حکمرانوں نے پورے خلوص کے ساتھ صلیبی طاقتوں کو شکست دینے اور مجھے واپس حاصل کرنے کی کوششیں شروع کردیں اور آخر اس خواب کو مرد مجاہد سلطان صلاح الدین ایوبی نے پورا کیا ، اور ۹۰ سال کے تکلیف دہ وقفہ کے بعد ۱۱۸۷ء میں اسلام کے ہی فرزند ارجمند کے ہاتھوں مجھے ظالموں کے پنجۂ استبداد سے آزادی حاصل ہوئی ، یہ ترک فاتح ایسا رحم دل تھا کہ اس نے شہر میں کسی بھی خون خرابے کو منع کردیا اور معمولی فدیہ لے کر مفتوحین کو آزاد کردیا ، اس کے بعد بھی ہم پر اہل تثلیث کی طرف سے یلغار ہوتی رہی ؛ لیکن اللہ کی مدد سے اہل توحید ہی کو غلبہ نصیب ہوتا رہا اور میری آبرو محفوظ رہی ۔
اللہ ترکوں کو جزاء خیر دے اور ان کی عظمت رفتہ کو واپس لائے کہ انھوںنے صدیوں حکومت کی ، ان سے میرا سودا کرنے کی بہت کوشش کی گئی ؛ لیکن کبھی انھوںنے دینی غیرت اور ملی حمیت کو فروخت نہیں کیا ، یہاں تک کہ خلافت ِعثمانیہ اہل تثلیث کی سازشوں اور عربوں کی نادانی اوراقتدار کی حرص و ہوس کی وجہ سے کمزور ہوگئی ،اب اس کا چل چلاؤ تھا ، اس کے علاقے اس کے قبضے سے نکل رہے تھے اور سلطنت قرض میں ڈوب چکی تھی ، یہودیوں نے اپنا ایک نمائندہ ’’ ایما نویل قراصو‘‘ کو سلطان عبد الحمید ثانی ۱۹۱۸ء کے پاس بھیجا کہ اگر سلطان فلسطین میں یہودیوں کے لئے ایک قومی وطن کی اجازت مرحمت فرمادیں تو صہیونی تحریک خلافت عثمانیہ کو پچاس کروڑ پاؤنڈ کا اور سلطان کے ذاتی خزانہ کے لئے پچاس لاکھ پاؤنڈ کا نذرانہ پیش کرے گی ، یہ اتنی بڑی رقم تھی کہ خلافت کا پورا قرض ادا ہوجاتا ؛ لیکن اللہ تعالیٰ شایانِ شان اجر عطا فرمائے سلطان کو ، کہ ملت ِاسلامیہ کا یہ فرزند غیور یہودیوں کی اس تحریص و ترغیب سے ذرا بھی متاثر نہیں ہوا اور اس نے کہا :
ڈاکٹر ہرزل ( جو صہیونی تحریک کا بانی اور محرک تھا ) سے جاکے کہہ دو کہ اس سلسلہ میں آج کے بعد کوئی سلسلۂ جنبانی نہ کرے ؛ کیوںکہ میں ہرگز دوسروں کو دینے کے لئے ارضِ فلسطین کے ایک بالشت سے بھی دستبردار نہیں ہوسکتا ، ارضِ فلسطین میری ملکیت نہیں ؛ بلکہ وہ میری قوم مسلم کی ملکیت ہے ، جس نے اپنے لہو سے اس کی خاک کو سینچا ہے ، یہودی اپنی لاکھوں کی رقم اپنے پاس رکھیں ۔ ( رسالہ ’’ التبیان ‘‘ قاہرہ ، شمارہ نمبر : ۳۸ ، ۴؍۲۴ ، کالم : ۳ ، ریاست خلافت عثمانیہ اور فاتحین ، بہ قلم ڈاکٹر رضا طیب)
بعض لوگوں نے یہ بھی نقل کیا ہے کہ سلطان کے سامنے تنکہ گرا ہوا تھا ، اس نے اس تنکے کو اُٹھایا اور یہودی نمائندہ سے کہا کہ قومی وطن تو دور کی بات ہے ، میں یہودیوں کو اس تنکے کے برابر جگہ بھی فلسطین میں دینے کو تیار نہیں ہوں ؛ لیکن بالآخر مسلمانوں کی باہمی آویزش اور عربوں کی عاقبت نا اندیشی کی وجہ سے جنگ عظیم اول (۱۹۱۴ء- ۱۹۱۸ء) کے بعد سلطنت عثمانیہ کے ٹکڑے ٹکڑے کردیئے گئے ، عاقبت نا اندیش عربوں نے اپنا پورا وزن ایک عیار اور اسلام دشمن برطانوی فوجی افسر ’’ لارنس آف عربیہ ‘‘ کے پلڑے میں ڈال دیا ، جس نے ان کو یقین دلایا تھا کہ خلافت ختم ہوتے ہی یہ پوری سلطنت عربوں کے حوالہ کردی جائے گی ، اس جنگ میں جرمنی اتحاد کو شکست ہوئی ، جس میں ترکی شامل تھا ، اور برطانوی اتحاد کو کامیابی حاصل ہوئی ، اس کے نتیجے میں اس پورے علاقہ کو مغربی ملکوں نے آپس میں تقسیم کرلیا ، فلسطین برطانیہ کے حصہ میں آیا اور اس کے وزیرخارجہ ’’ آرتھو جیمس بالفور ‘‘ نے ۱۷۹۱ء میں فلسطین میں یہودیوں کے لئے ایک فوجی وطن قائم کرنے کا وعدہ کیا ، جس کو ’’ وعدۂ بالفور ‘‘ کہتے ہیں ، پھر تو برطانیہ نے پوری دنیا سے لا لاکر یہودیوں کو یہاں آباد کرنا شروع کردیا اور ایک یہودی مملکت قائم کرنے کی بھرپور تیاری کرلی ، بالآخر نومبر ۱۹۴۷ء میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے قرار داد نمبر ۱۸۱ پاس کی ، جس کے تحت فلسطین کو عربی اور یہودی سلطنتوں میں تقسیم کردیا گیا ، یہودی ریاست کو ۵۴ فیصد زمین دی گئی اور عربی ریاست کو ۴۵ فیصد ، اور ایک فیصد یعنی بیت المقدس کی جگہ کو عارضی طورپر عالمی خطہ قرار دیا گیا ؛ چنانچہ ۱۴؍ مئی ۱۹۴۸ء کو صہیونیوں نے مملکت اسرائیل کا اعلان کردیا ، لاکھوں فلسطینی اُجاڑ دیئے گئے ، اس کے بعد سے پھر بار بار ان کا قتل عام ہوتا رہا اور آخر عرب قومیت کے جاہلی جذبہ سے متاثر ہوکر خلافت ِاسلامی کا قصر عالی مقام منہدم کرنے والوں کو ان کی شامت اعمال کی سزا جلد ہی مل گئی ۔
ابھی بھی میں عربی ریاست ہی کا حصہ تھا؛ لیکن ۱۹۶۷ء کی جنگ میں مجھ پر بھی اسرائیل نے تسلط جما لیا ، اس وقت کے حکمراں موجودہ حکمرانوں سے کہیں بہتر تھے ، انھوں نے یہ موقف اختیار کیا کہ ہم اسرائیل کو تسلیم نہیں کریں گے اور ۱۹۶۷ء کا مقبوضہ علاقہ واپس حاصل کرکے رہیں گے ، متعدد بار اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل سے اس کے حق میں قرار داد بھی منظور کرائی گئی ؛ لیکن اسرائیل اور مغربی ممالک نے اس کو کوئی اہمیت نہیں دی کہ : ’’ جرم ضعیفی کی سزا مرگِ مفاجات ‘‘ آخر مسلم حکمرانوں کی حرص و طمع اور ضمیر فروشی نے رنگ لانا شروع کیا ؛ چنانچہ ۱۹۶۷ء میں مصری صدر انور السادات نے اسرائیل سے ہاتھ ملا لیا ، پھر اُردن نے سر جھکایا ، یہاں تک کہ ’ تنظیم آزادی فلسطین ‘جو فلسطینیوں کی اصل نمائندہ تنظیم تھی ، نے ۱۹۹۱ء میں میڈرڈ ( اسپین ) میں اسرائیل سے مذاکرات کئے اور بالآخر ۱۹۹۳ء میں معاہدہ امن پر دستخط ہوگیا ، اس میں فلسطین کو نہ وطن ملا اور نہ بیت المقدس ، نہ پندرہ سے بیس لاکھ اُجاڑے گئے فلسطینیوں کی واپسی کی ضمانت حاصل ہوئی ، صرف زمین کا ایک چھوٹا ٹکڑا دے دیا گیا کہ بچے کچھے فلسطینی اسرائیل کی غلامی میں زندگی کی سانس لیتے رہیں ، یہ کہنا بے جا نہ ہوگا کہ اس معاہدہ میں میرے بیٹوں نے میری آبرو فروخت کردی ، نہ اسلامی اقدار کا لحاظ رکھا اور نہ عربی غیرت کا کوئی پاس۔
یہ تو اللہ کا شکر ہے کہ خود فلسطین میں جذبۂ شہادت سے سرشار کچھ لوگ اُٹھے اور انھوںنے ظاہری وسائل سے محروم ہونے کے باوجود جہاد شروع کیا ، جن میں سرفہرست شیخ عز الدین محمد قسام ہیں ، وہ واقعی بڑا مرد مجاہد اور اسلامی حمیت سے سرشار شخصیت کا مالک تھا ، مجاہدین کی یہ تحریک ’ حماس ‘ کے نام سے آگے بڑھی اور وہ اب بھی جان کو ہتھیلی پر رکھ کر اپنے لہو کا نذرانہ پیش کرتے ہوئے میری آزادی کی جدوجہد کررہی ہے ؛ لیکن آہ اور صدبار آہ ! کہ جو مسلمان مجھے اپنا قبلۂ اول کہتے ہیں اور اپنے نبی کے سفر آسمانی کی پہلی منزل قرار دیتے ہیں ، انھوںنے اپنے دل ودماغ صہیونیوں کے ہاتھ بیچ دیئے ہیں ، انھوںنے چھپے طورپر اسرائیل سے گہرے دوستانہ مراسم قائم کرلیئے ہیں ، مصر میں جب سے اس عہد کے سب سے بڑے منافق ’’ سیسی ‘‘ نے ظلم و جور کے ذریعہ اپنی آمریت قائم کی ہے ، اس نے حماس پر عرصۂ حیات تنگ کردیا ہے ، امریکہ اوراسرائیل کی ہاں میں ہاں ملاکر عرب حکومتوں نے میری بازیابی کی کوشش کو دہشت گردی قرار دے دیا ہے ، اسرائیل نے کئی بار مسلمانوں اورعربوں کے مقتل سجائے ہیں ؛ لیکن وہ دہشت گرد نہیں ہیں اور جو لوگ اپنے مادر وطن اور مقدس مقامات کی آزادی کی لڑائی لڑرہے ہیں ، وہ دہشت گرد ہیں ، خلافت ِعثمانی کا جانشین ترکی اور اس کا صدر طیب اُردگان ’ بیاباں کی اس شب تاریک میں قندیل رہبانی ‘ کا درجہ رکھتا ہے ، اس کو موردِ الزام ٹھہرایا جاتا ہے ، قطر نے ہمارے سینہ گیتی پر بسنے والوں کو انسانی مدد فراہم کی ، اسی کا بائیکاٹ کیا جارہا ہے ، اسرائیل کے جہاز عرب ملکوں کی فضاؤں سے گذرسکتے ہیں ؛ لیکن اس برادر مسلم ملک کا جہاز ان کی فضا سے نہیں گذرسکتا ، جب کوئی جھوٹ بولنے اور اس کو پھیلانے کا عادی ہوجاتا ہے تو اس میں سچ کو سننے کی صلاحیت ختم ہوجاتی ہے ؛ اسی لئے ظالموں نے اپنے ظلم کی پردہ پوشی کے لئے الجزیرہ کی آواز بند کرنے کا تہیہ کرلیا ہے ؛ تاکہ مظلوموں کی آہ بھی لوگوں تک نہ پہنچ سکے ، اور سنا ہے کہ عرب حکمراں مل جل کر میرے کفن دفن کا نظم کرنے کی سازش میں مشغول ہیں کہ حماس کو اُجاڑ دیا جائے ، بھاگنے والے فلسطینیوں کو سینا کے بے آب و گیاہ صحرا میں بسادیا جائے اور غزہ اسرائیل کے حوالہ ہو جائے ؛ تاکہ فلسطین کا مسئلہ ختم ہوجائے اور اسرائیل کے غاصبانہ قبضہ کے خلاف کوئی صدائے احتجاج بھی بلند نہ ہو ۔
میرے سینے سے ہوک سی اُٹھتی ہے ، میری آنکھوں سے آنسوؤں کا سمندر رواں ہے ، میرے ہونٹوں سے نکلنے والے فغانِ درد نے بے زبان شجر و حجر کو بھی تڑپا دیا ہے ، کاش ! کوئی عمر فاروق ظاہر ہوتا اور ہمیں اس اسیری سے نجات دلاتا ، کاش ! کوئی صلاح الدین ایوبی آتا اور ہمیں اس قید ظلم وجور سے آزاد کردیتا ، اور کاش ! آج کے مسلم حکمرانوں میں کوئی سلطان عبد الحمید ہوتا جو مادی نقصان اور اقتدار سے محرومی کو تو گوارا کرلیتا ؛ لیکن دینی حمیت اور ملی غیرت کا سودا نہیں کرتا !!

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی


مولانا کا شمار ہندوستان کے جید علما ء میں ہوتا ہے ۔ مولانا کی پیدائش جمادی الاولیٰ 1376ھ (نومبر 1956ء ) کو ضلع در بھنگہ کے جالہ میں ہوئی ۔آپ کے والد صاحب مولانا زین الدین صاحب کئی کتابوً کے مصنف ہیں ۔ مولانا رحمانی صاحب حضرت مولانا قاضی مجا ہد الاسلام قاسمی رحمۃ اللہ علیہ کے بھتیجے ہیں۔آپ نے جامعہ رحمانیہ مو نگیر ، بہار اور دارالعلوم دیو بند سے فرا غت حاصل کی ۔آپ المعھد الاسلامی ، حید رآباد ، مدرسۃ الصالحات نسواں جالہ ، ضلع در بھنگہ بہار اور دار العلوم سبیل الفلاح، جالہ ، بہار کے بانی وناظم ہیں ۔جامعہ نسواں حیدرآباد عروہ ایجو کیشنل ٹرسٹ ،حیدرآباد ، سینٹر فارپیس اینڈ ٹرومسیج حیدرآباد پیس فاؤنڈیشن حیدرآباد کے علاوہ آندھرا پر دیش ، بہار ، جھار کھنڈ ، یوپی اور کر ناٹک کے تقریبا دو درجن دینی مدارس اور عصری تعلیمی اداروں کے سر پرست ہیں ۔ المعھد العالی الھند تدریب فی القضاء والافتاء ، پھلواری شریف، پٹنہ کے ٹرسٹی ہیں ۔اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا اور مجلس تحفظ ختم نبوت ،آندھرا پر دیش کے جنرل سکریٹری ہیں ۔

آل انڈیا مسلم پر سنل لا بورڈ کے رکن تا سیسی اور رکن عاملہ ہیں ۔ مجلس علمیہ ،آندھرا پر دیش کے رکن عاملہ ہیں ۔امارت شرعیہ بہار ،اڑیسہ وجھار کھنڈ کی مجلس شوریٰ کے رکن ہیں ،امارت ملت اسلامیہ ،آندھرا پر دیش کے قاضی شریعت اور دائرۃ المعارف الاسلامی ، حیدرآباد کے مجلس علمی کے رکن ہیں ۔ آپ النور تکافل انسورنش کمپنی ، جنوبی افریقہ کے شرعی اایڈوائزر بورڈ کے رکن بھی ہیں ۔
اس کے علاوہ آپ کی ادارت میں سہ ماہی ، بحث ونظر، دہلی نکل رہا ہے جو بر صغیر میں علمی وفقہی میدان میں ایک منفرد مجلہ ہے ۔روز نامہ منصف میں آپ کے کالم ‘‘ شمع فروزاں‘‘ اور ‘‘ شرعی مسائل ‘‘ مسقتل طور پر قارئین کی رہنمائی کر رہے ہیں ۔
الحمد للہ آپ کئی کتابوں کے مصنف ہیں ۔آپ کی تصنیفات میں ،قرآن ایک الہامی کتاب ، 24 آیتیں ، فقہ القرآن ، تر جمہ قرآن مع مختصر تو ضیحات، آسان اصول حدیث، علم اصول حدیث ، قاموس الفقہ ، جدید فقہی مسائل ، عبادات اور جدیدمسائل، اسلام اور جدید معاشرتی مسائل اسلام اور جدید معاشی مسائل اسلام اور جدید میڈیل مسائل ،آسان اصول فقہ ، کتاب الفتاویٰ ( چھ جلدوں میں ) طلاق وتفریق ، اسلام کے اصول قانون ، مسلمانوں وغیر مسلموں کے تعلقات ، حلال وحرام ، اسلام کے نظام عشر وزکوٰۃ ، نئے مسائل، مختصر سیرت ابن ہشام، خطبات بنگلور ، نقوش نبوی،نقوش موعظت ، عصر حاضر کے سماجی مسائل ، دینی وعصری تعلیم۔ مسائل وحل ،راہ اعتدال ، مسلم پرسنل لا ایک نظر میں ، عورت اسلام کے سایہ میں وغیرہ شامل ہیں۔ (مجلۃ العلماء)

کل مواد : 106
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019

تبصرے

يجب أن تكون عضوا لدينا لتتمكن من التعليق

إنشاء حساب

يستغرق التسجيل بضع ثوان فقط

سجل حسابا جديدا

تسجيل الدخول

تملك حسابا مسجّلا بالفعل؟

سجل دخولك الآن
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019