مسلمانوں کے لئے لائحۂ عمل

اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا(دہلی)جنوبی ایشیامیں عصر حاضرمیں پیداہونے والے شرعی مسائل پراجتماعی غوروفکرکرنے والاسب سے بڑاادارہ ہے،عالم اسلام میں بھی اس کے فیصلوں کواہمیت کی جاتی ہے،۴-۶مارچ۲۰۱۷ءکومدھیہ پردیش کے شہر’’اجین ‘‘میں اس کا۲۶واں فقہی سیمینارمنعقدہوا،جس میں ملک وبیرون ملک سے تین سوسے زیادہ علماء وارباب افتاء شریک تھے،راقم سطورنے اس موقع پرموجودہ حالات کوسامنے رکھتے ہوئے جو’’کلیدی خطبہ‘‘دیا،اس کاایک حصہ حالات کی مناسبت سے قارئین کی خدمت میں پیش ہے۔(رحمانی)
مولانا خالد سیف اللہ رحمانی 
ملک اس وقت ایک دوراہے پر کھڑا ہے، نفرت کی چنگاری اب آتش فشاں بن چکی ہے، اس ملک کی خمیر میں محبت، بھائی چارہ، امن وآشتی، مروت ورواداری، اخلاقی اقدار کی پاسداری، مذہبی مقدسات کا احترام اور مختلف مذہبی گروہوں کے درمیان اتحاد وہم آہنگی کی کیفیت تھی اور محبت کی خوشبو اس ملے جلے سماج کو ہمیشہ عطربار رکھتی تھی؛ لیکن اب صورت حال بہت کچھ تبدیل ہوتی جارہی ہے، اس پس منظر میں مسلمانوں کو دو اہم محاذ پر کام کرنا ہے، ایک: اپنی دینی شناخت کو بچانے کا، دوسرے: ملک کی جمہوری قدروں کی حفاظت کا، پہلا کام دین سے محبت کا تقاضہ ہے اور دوسرا وطن سے محبت کا، ان حالات میں ہمیں ایک ایسا لائحہ عمل تیار کرنا چاہئے، جو ان دونوں تقاضوں کو پورا کرتا ہو۔
غور کیا جائے تو اس وقت بنیادی طور پر تین باتیں اس سلسلہ میں خصوصی اہمیت کی حامل ہیں:
پہلی بات یہ ہے کہ مسلمانوں کو اپنے دین پر ثابت قدم رکھا جائے، ایک طرف جدید تعلیم یافتہ مسلمانوں کو شکوک وشبہات سے بچایا جائے، دوسری طرف عام مسلمانوں کے اندر پُرمشقت حالات میں بھی دین پر ثابت قدم رہنے کا جذبہ پیدا کیا جائے، صورت حال یہ ہے کہ عالمی وملکی سطح پر ذرائع ابلاغ اسلام کے خلاف شکوک وشبہات کے کانٹے بونے میں سرگرم ہیں، اور شب وروز اس کی کوششیں کی جارہی ہیں، اس کے نتیجہ میں کہیں انکار والحاد کی طرف قدم بڑھ رہا ہے، قانون شریعت کو قابل اصلاح قرار دیا جارہا ہے، شریعت کے مسلمہ احکام میں بھی تبدیلی کی باتیں کی جارہی ہیں، بعض مسلمانوں میں بھی یہ سوچ پیدا ہورہی ہے کہ اسلام میں عورتوں کے ساتھ انصاف نہیں کیا گیا ہے، گزشتہ دنوں شریعت کے عائلی قانون کے تحفظ کے سلسلہ میں جو دستخطی مہم شروع کی گئی، تو جہاں بیشتر مسلمانوں نے جوش وخروش کے ساتھ اس میں حصہ لیا، وہیں کچھ ایسے مردوعورت بھی پائے گئے جنہوں نے دین وشریعت پر شکوک وشبہات کی انگلی اٹھائی اور تعدد ازدواج کے جواز، مرد کو دیئے گئے حق طلاق اور بیٹوں اوربیٹیوں کے حق میراث جیسے موضوعات کو نعوذ باللہ نامنصفانہ قرار دیا، اسی ذہنی ارتداد کی مثال مسلم پرسنل لا کے خلاف عدالت عظمی میں داخل ہونے والی ایک درجن سے زیادہ نام نہاد مسلم خواتین کی درخواستیں ہیں، اگرچہ کئی دہوں سے کچھ خدا بیزار لوگوں کی طرف سے ایسی آوازیں اٹھائی جارہی تھیں؛ لیکن اسلام دشمن فرقہ پرست طاقتوں کو پہلی بار اس کا موقع ملا ہے کہ اتنے بڑے پیمانے پر خود مسلم سماج کی طرف سے اس طرح کی نامسعود آواز بلند کی گئی ہے۔
دوسری طرف ذرائع ابلاغ اور نصابی کتابوں کے ذریعہ دیو مالائی کہانیوں کا تقدس ذہنوں میں بیٹھایا جارہا ہے، معصوم بچوں سے برداران وطن کی کتابوں کے اشلوک پڑھائے جارہے ہیں، مشرکانہ ترانے رائج کئے جارہے ہیں، ایسے نعرے لگوائے جاتے ہیں، جو مخالف اسلام تصور پر مبنی ہیں، جو چیز بار بار جبر کے ذریعہ کرائی جاتی ہے، وہ بھی آہستہ آہستہ ذہن کے لئے قابل قبول ہونے لگتی ہے، انسان اس کے جواز کے راستے ڈھونڈھنے لگتا ہے، اور بالآخر اختیار اور رضامندی کے ساتھ اسے قبول کرلیتا ہے، یہ ایک ایسا فکری ارتداد ہے، جو دبے پاؤں مسلم سماج میں داخل ہوا تھا اور اب اس کی رفتار تیز ہوتی جارہی ہے، یہ اعلانیہ دعوت ارتداد تو نہیں ہے، لیکن مسلمانوں میں ارتدادپیدا کرنے کی ایسی کوشش ہے کہ ان کی اگلی نسلیں ہنسی خوشی اس کو قبول کرلیں۔
ان حالات میں ایک طرف پورے شعور کے ساتھ دلیل اور عقل وحکمت کے ہتھیار کے ذریعہ شکوک وشبہات کے ان کانٹوں کو نکالنے کی ضرورت ہے، جو دلوں میں گھر کرتے جارہے ہیں اور جن کے ایک وبائی مرض کی طرح پھیل جانے کا اندیشہ ہے، اور دوسری طرف مسلمانوں کو آزمائشوں کے باوجود دین پر استقامت اور ثابت قدمی کی اہمیت بتانے کی ضرورت ہے، اللہ تعالی کا ارشاد ہے:
’’یا أیہا الذین آمنوا اصبروا وصابروا ورابطوا واتقوا اللہ لعلکم تفلحون‘‘ (آل عمران: ۲۰۰)۔
یہاں ’’صبر ‘‘ کے معنی دین کے راستہ میں ہونے والی تکلیفوں کو برداشت کرنے اور ’’صابروا ‘‘ سے مخالف اسلام طاقتوں سے مقاومت اور حکمت کے ساتھ ان کا مقابلہ اور ’’رابطوا ‘‘ سے اسلامی مملکت اور اسلامی اقدار کی حفاظت کے معنی مراد لئے گئے ہیں، چنانچہ حضرت ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ اس آیت کا تعلق صرف جہاد سے نہیں ہے؛ کیونکہ حضورﷺ کے زمانہ میں تو سرحدوں کی حفاظت کے لئے جنگ کی نوبت ہی نہیں آئی تھی:
’’لم یکن فی زمان النبیﷺ غزوٌ یرابط فیہ‘‘ (الدر المنثور بحوالہ المستدرک للحاکم ۲؍۴۱۶)۔
اور علامہ ابن ابی حاتم سے اس آیت کی تفسیر مروی ہے:
’’أمرہم أن یصبروا علی دینہم ولا یدعوہ لشدۃ ولا رخاء ولا سراء ولا ضراء وأمرہم أن یصابروا الکفار وأن یرابطوا المشرکین‘‘ (حوالہ سابق)۔
اللہ تعالی نے مسلمانوں کو حکم دیا ہے کہ وہ اپنے دین پر عمل کرنے کے لئے صبر وبرداشت کا مظاہرہ کریں، حالات کی سختی ونرمی، راحت یا تکلیف کی وجہ سے دین کو چھوڑ نہ دیں، مخالفین اسلام کا (مناسب طور پر) مقابلہ کریں اور ان کے مقابلہ میں جمے رہیں۔
نیز بیہقی نے زید بن اسلم سے ’’رابطوا ‘‘ کی تشریح نقل کی ہے:’’رابطوا علی دینکم‘‘ (حوالہ سابق) یعنی اپنی دینی سرحدوں کی حفاظت کرو، اس سے معلوم ہوا کہ ’’رباط ‘‘ جس کے ایک دن کو رسولﷺ نے دنیا ومافیہا سے بہتر قرار دیا ہے: ’’رباط یوم فی سبیل اللہ خیر من الدنیا وما علیہا‘‘ (صحیح بخاری ۳؍۲۲۴، کتاب الجہاد والسیر)، اس سے اصلاً اور اولاً اسلامی مملکت کی زمینی سرحدوں کی حفاظت تو مراد ہے ہی، مگر اسلام کی فکری سرحدوں کی حفاظت بھی اس میں شامل ہے؛ مفہوم میں اس عموم کی تائید لغت سے بھی ہوتی ہے؛ چنانچہ اہل لغت نے ’’مرابطہ ‘‘ کے معنی کسی چیز پر ایسی گرہ باندھنے کے بیان کئے ہیں جو کھلنے نہ پائے، ’’المرابطۃ عند العرب:العقد علی الشئی حتی لا ینحل‘‘ (تفسیر قرطبی ۱۰؍۳۲۷)۔
اس پس منظرمیں ضروری ہے کہ ایک طرف علماء اپنے آپ کو اس کام کے لئے تیار کریں کہ اسلام کے خلاف پیدا کئے جانے والے شکوک وشبہات کا عصر حاضر کے اسلوب اور طرز استدلال کے مطابق جواب دیں اور غلط فہمیوں کو دور کریں، دوسری طرف امت کو سمجھائیں کہ دین حق پر استقامت کے لئے انبیاء، صحابہ اور سلف صالحین نے کیسی کیسی مشقتیں اٹھائی ہیں، انہو ںنے کانٹوں کے بستر پر چلنا اور آگ کے دریا میں تیرنا گوارہ کیا؛ لیکن ان کے پائے استقامت میں ذرا بھی جنبش نہیں ہوئی کہ مسلمان وہی ہے جو آخرت کے لئے دنیا کا سودا کرنے پر تیار ہو۔
ایک اہم اور قابل توجہ بات یہ بھی ہے کہ اس وقت ہمارے ملک میں مسلمانوں کی تاریخ پر متواتر حملے کئے جارہے ہیں، فلموں کے ذریعہ، نیشنل اور سوشل میڈیا کے ذریعہ، لٹریچر اور نصابی کتابوں کے ذریعہ، اشتعال انگیز تقریروں اورسمیناروں میں پیش کئے جانے والی بے بنیاد تحریروں کے ذریعہ، پوری قوت کے ساتھ یہ بات ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ مسلمانوں کا عہد حکومت اس ملک میں صرف ظلم وبربریت اور دوسری قوموں کے ساتھ جبر وظلم کی ایک طویل داستان ہے، جس میں نہ ان کی جان ومال محفوظ تھی، نہ عزت وآبرو، یہاں تک کہ آریوں کو اس ملک کا اصل باشندہ قرار دیا جارہا ہے اور مسلمانوں کو بدیشی، بودھوں پر برہمنوں نے جو مظالم ڈھائے، وہ تاریخ کی ایک روشن حقیقت ہے، یہاں تک کہ ان کی بعض مقدس عبادت گاہیں آج بھی ہندو بھائیوں کے زیر تصرف ہیں، اسی طرح شودروں پر ہزاروں سال سے جور وستم روا رکھا گیا ہے اور آج بھی جاری ہے، ان سب کو تاریخ کی سچائیوں کی خاکستر میں دبانے کی کوشش کی جارہی ہے۔
اس کا اثر ایک طرف برادران وطن میں نفرت کی شکل میں اور دوسری طرف خود مسلمانوں کی نئی نسل میں احساس کمتری کی صورت میں ظاہر ہورہا ہے، اس کا ایک پہلو تو سیاسی ہے جو ملی تنظیموں کے کرنے کا ہے، لیکن دوسرا علمی وفکری ہے، جس کی طرف علماء اور اسکالرس کو توجہ دینے کی ضرورت ہے، ماضی قریب میں علامہ شبلی نعمانیؒ، علامہ سید سلیمان ندویؒ، ڈاکٹرحمیداللہ ؒ، سید صباح الدین عبد الرحمن صاحبؒ وغیرہ ایسی شخصیات گزری ہیں، جنہوں نے تاریخ کے غبار آلود چہرے کو صاف کرنے کی کامیاب کوششیں کیں، آج پھر ضرورت ہے کہ علماء اس کی طرف توجہ کریں؛ کیونکہ مسلم عہد کی تاریخ فارسی کتابوں کے دفینوں میں محفوظ ہے، جس کو علماء ہی باہر لاسکتے ہیں اور اُس نفرت انگیز پروپیگنڈے کا جواب دے سکتے ہیں، جس میں تاریخ کو ازسر نو لکھنے کی کوشش کی جارہی ہے، تاریخ کی اہمیت اور اس کے گہرے اثرات کا تجزیہ کرتے ہوئے مشہور عرب عالم شیخ محمود عقاد نے لکھا ہے:
’’والتاریخ لیس علم الماضی بل ہو علم الحاضر، والمستقبل فی واقع الأمر وحقیقتہ، فالأمۃ التی تستطیع البقاء، ہی الأمۃ التی لہا ضمیر تاریخی، ومعرفۃ التاریخ وعشق لہ‘‘۔
نیز ایک اور بڑے صاحب دانش نے لکھا ہے :
’’مثل القوم أضاعوا تاریخہم کلقیط عيّ فی الحي انتساباً‘‘۔
افسوس کہ اس اہم ضرورت کی طرف سے مسلمان عمومی طور پر غفلت میں مبتلا ہیں، لیکن حالات کا تقاضہ ہے کہ اب علماء اس فراموش کردہ گوشہ کی طرف بھی توجہ دیں۔

اگر ملک کے موجودہ حالات کے پس منظر میں غور کیاجائے تو اس وقت مسلمانوں کے لئے سب سے بڑا مسئلہ ان کا تحفظ ہے،تحفظ کی ایک مادی تدبیر ہے، جو ہر انسان انفرادی حیثیت سے اور ہر گروہ اجتماعی طریقہ پر روبہ عمل لاتا ہے اور یقیناً ہمیں اس سے غافل نہیں ہونا چاہئے، یہ ہمارا شرعی فریضہ اور قانونی حق ہے، لیکن تحفظ کا ایک غیبی نظام بھی ہے، جس کا خود اللہ تعالی نے اپنی کتاب مبین میں ذکر فرمایا ہے، چنانچہ ارشاد ہے:
’’یا أیہا الرسول بلغ ما أنزل إلیک من ربک وإن لم تفعل فما بلّغت رسالتہ واللہ یعصمک من الناس، إن اللہ لا یہدی القوم الکافرین‘‘ (سورہ مائدہ: ۶۷)۔
’’عصمت من الناس ‘‘ سے مراد اعداء اسلام سے حفاظت ہے، چنانچہ حضرت عبد اللہ بن عباسؓ سے روایت ہے کہ مکہ میں رسول اللہﷺ کی حفاظت کا اہتمام کیا جاتا تھا اور حضرت ابوطالب روزانہ بنو ہاشم کے کچھ لوگوں کو اس کام پر مامور فرماتے تھے، جب یہ آیت نازل ہوئی تو آپﷺ نے فرمایا: اللہ تعالی نے جنات اور انسان سے میری حفاظت کا ذمہ لے لیا ہے؛ اس لئے اب کسی پہرہ دار کی ضرورت نہیں ہے (المعجم الکبیر للطبرانی ۱۱؍۲۵۶، حدیث: ۱۱۶۶۳)، ام المؤمنین حضرت عائشہؓ سے بھی منقول ہے کہ آپ کی قیام گاہ پر پہرہ دیا جاتا تھا، حضورﷺ نے اس آیت کے نازل ہونے کے بعد قبہ سے سرمبارک نکالا اور ارشاد فرمایا:’’تم لوگ واپس ہوجاؤ، اللہ نے خود میری حفاظت فرمائی ہے ‘‘ (ترمذی، کتاب تفسیر القرآن، حدیث: ۳۰۴۶)۔
یہ آیت صاف طور پر بتاتی ہے کہ اللہ کی طرف سے نازل کئے جانے والے دین کی طرف ہدایت سے محروم لوگوں کو دعوت دینے پر اللہ تعالی کے خصوصی تحفظ کا وعدہ ہے اور اللہ کی حفاظت سے بڑھ کر کس کی حفاظت ہوسکتی ہے؟
جیسا کہ معلوم ہے کہ بعثت کے بعد آپﷺ نے چند سال تک اسلام کی عمومی دعوت نہیں دی، پھر حکم ربانی ہوا:
’’فاصدع بما تؤمر وأعرض عن المشرکین إنا کفیناک المستہزئین‘‘ (حجر: ۹۴۔۹۵)۔
آپ کو جس امر کا حکم دیا گیا ہے، اسے صاف سنا دیجئے اور مشرکین کی پروا نہ کیجئے، ہم آپ کے لئے تمسخرکرنے والوں کے مقابلہ میں کافی ہیں۔
اس میں رسول اللہﷺ سے تین باتیں ارشاد فرمائی گئی ہیں: ایک: اعلانیہ دعوت دین کی، دوسرے: مشرکین سے اعراض اور الجھاؤ سے بچنے کی، یعنی جن لوگوں میں دعوت حق کو قبول کرنے کی صلاحیت ہو، ان پر مسلسل دعوتی محنت کی جائے اور جو اپنے باطل نقطۂ نظر پر بضد ہوں اور کسی طرح دعوتِ حق کو قبول کرنے پر تیار نہ ہوں تو ان کے ساتھ اعراض اور گریز کا طریقہ اختیار کیا جائے، ان کے ساتھ الجھ کر وقت ضائع نہ کیا جائے، تیسری بات یہ ارشاد فرمائی گئی کہ اگر دونوں باتوں پر عمل ہو تو جو لوگ دین اور اہل دین کا مذاق اڑاتے ہیں، خواہ یہ مذاق زبان سے ہو یا قلم سے، اور دوبدو ہو یا ذرائع ابلاغ کے ذریعہ، ان کے استہزاء کے مقابلہ میں اللہ تعالی کافی ہیں، اللہ تعالی داعیان حق کی مدد فرمائیںگے اور اہل باطل کی بے جا اور جھوٹ پر مبنی کوششوں کو پاش پاش کردیںگے۔
یہ آیتیں اللہ تعالی کے غیبی نظام کو ظاہر کرتی ہیں کہ جب مسلمان دعوت حق کے لئے اٹھ کھڑے ہوتے ہیں تو اللہ تعالی کی خصوصی مدد ان کے ساتھ ہوتی ہے، تحفظ غیبی کی ڈھال انہیں دشمنوں کی تلوار سے بچاتی ہیں اور اہل ایمان کے خلاف کیاجانے والا شور شرابہ بالآخر دم توڑ دیتا ہے، یا تو اعداء اسلام کو ایمان کی توفیق میسر آجاتی ہے اور کعبہ کو بت خانوں سے پاسبان مل جاتے ہیں ،یا پھر قدرت کا دست غضب انہیں دبوچ لیتا ہے۔
اسلام کی کشش اور اس کی قوت تسخیر ایک ایسی حقیقت ہے جس نے تاریخ کے ہر دور میں اپنا جلوہ دکھایا ہے، مسلمانوں نے اگرچہ مصر کو فتح کیا؛ لیکن مصر کے عیسائیوں نے کسی جبر ودباؤ کے بغیر دامن اسلام میں آنا قبول کیا، چنگیز خاں نے مسلمانوں پر جو مظالم ڈھائے، ان کو پڑھ کر اور سن کر آج بھی آنکھوں کو حق ہے کہ خون کے آنسو روئیں، اور اس کی نسلوں تک یہ سلسلہ جاری رہا، یہاں تک کہ تاتاری سپاہیوں اور کمانڈروں میں مسلمانوں کے سروں کے بلند مینار بنانے کا مقابلہ ہوتا تھا؛ لیکن آخر تاتاریوںکی مختلف شاخوں نے اسلام قبول کرلیا، ان ہی میں وہ مغل خاندان بھی ہے، جس نے کم وبیش چار سو سال ہندوستان پر پُرشوکت حکومت کی اور اگرچہ دعوت کا زیادہ کام صوفیہ کے ذریعہ ہوا، لیکن انہیں ان حکومتوں کی پشت پناہی حاصل ہوتی رہی، دوسو سال تک سلجوقی ترکوں کی حکومت رہی اور پانچ سو سال سے زیادہ دنیا کے نقشہ پر عثمانی خلافت سپر پاور کی حیثیت سےباقی رہی، جس کے نام سے مغرب کے ایوان ہائے اقتدار میں لرزہ طاری ہوجاتا تھا، یہ سب تاتاریوں ہی کی مختلف شاخیں تھیں، سقوط اندلس کے بعد الجزائر میں وحشی بربری قبائل دامن ایمان میں آئے، یہ سب دعوتی کوششوں کا ثمرہ تھا، دعوتی جدوجہد ہی کے ذریعہ انڈونیشیا میں اسلام پھیلا، راجپوتوں کی سنگلاخ زمین میں خواجہ معین الدین اجمیریؒ نے ایمان کا پودا لگایا، شیخ فرید الدین شکرگنج ؒکے بارے میں کہا جاتا ہے کہ سولہ برادریوں نے مکمل طورپر ان کے ہاتھوں پر اسلام قبول کیا، شیخ جلال الدینؒ نے بنگال میں ایمان کا چراغ جلایا اور انیسویں صدی میں مولانا کرامت علی جونپوریؒ نے موجودہ بنگلہ دیش میں تبلیغ اسلام کی خدمت انجام دی، کہا جاتا ہے کہ ان کی کوششوں سے ایک تا دوکروڑ لوگ مسلمان ہوئے، پورا کشمیر سید علی ہمدانی ؒکے دست فیض پر مشرف بہ اسلام ہوا اور مغربی ہندوستان کے بڑے علاقہ میں شیخ بہاء الدین زکریاؒ کے ذریعہ اسلام کی اشاعت ہوئی۔
غرض کہ اسلام اللہ تعالی کا بھیجا ہوا دین فطرت ہے؛ اس لئے اس میں ایسی کشش ہے کہ وہ سخت سے سخت دشمن کو بھی اپنا اسیر محبت بنا لیتا ہے، اسلام کی اشاعت فاتحین کے ذریعہ نہیں ہوئی؛ بلکہ مبلغین کے ذریعہ ہوئی ہے، تاریخ ادبیات عرب کے مصنف پروفیسر ہٹی لکھتے ہیں:
’’مسلمانوں کے مذہب نے وہاں فتح حاصل کرلی جہاں ان کے ہتھیار ناکام ہوچکے تھے ‘‘۔
نیز دعوت اسلام کے مشہور مورخ ٹی ڈبلیو آرنلڈ کابیان ہے:
’’اپنے سیاسی زوال کے زمانہ میں اسلام نے بعض انتہائی شاندار اور روحانی فتوحات حاصل کی ہیں، دوبڑے تاریخی مواقع پر وحشی کافروں نے اپنے پاؤں محمدﷺ کے پیروؤں کی گردن پر رکھ دیئے تھے، گیارہویں صدی عیسوی میں سلجوقی ترکوں نے اور تیرہویں صدی عیسوی میں مغلوں نے، مگر ہر بار فاتح نے اپنے مفتوح کے مذہب کو قبول کرلیا ‘‘۔
اس طویل سمع خراشی کا مقصد یہ ہے کہ گذشتہ کئی صدیوں سے وطن عزیز میں ہم لوگوں نے دعوت دین کی کوئی منظم اور مربوط کوشش نہیں کی ہے، ورنہ اس ملک کا جغرافیہ بالکل مختلف ہوتا؛ لیکن اب بھی وقت نہیں گیا ہے، اسلام کی تاریخ ہمیں بتاتی ہے کہ مشکل سے مشکل وقت میں بھی اگر مسلمان اس کام کو لے کر اٹھیں تو کامیابی ان کے قدم چومتی ہے اور اس طرح اللہ تعالی کے غیبی نظام کے مطابق اس امت کے تحفظ کا سروسامان ہوسکتا ہے۔

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی


مولانا کا شمار ہندوستان کے جید علما ء میں ہوتا ہے ۔ مولانا کی پیدائش جمادی الاولیٰ 1376ھ (نومبر 1956ء ) کو ضلع در بھنگہ کے جالہ میں ہوئی ۔آپ کے والد صاحب مولانا زین الدین صاحب کئی کتابوً کے مصنف ہیں ۔ مولانا رحمانی صاحب حضرت مولانا قاضی مجا ہد الاسلام قاسمی رحمۃ اللہ علیہ کے بھتیجے ہیں۔آپ نے جامعہ رحمانیہ مو نگیر ، بہار اور دارالعلوم دیو بند سے فرا غت حاصل کی ۔آپ المعھد الاسلامی ، حید رآباد ، مدرسۃ الصالحات نسواں جالہ ، ضلع در بھنگہ بہار اور دار العلوم سبیل الفلاح، جالہ ، بہار کے بانی وناظم ہیں ۔جامعہ نسواں حیدرآباد عروہ ایجو کیشنل ٹرسٹ ،حیدرآباد ، سینٹر فارپیس اینڈ ٹرومسیج حیدرآباد پیس فاؤنڈیشن حیدرآباد کے علاوہ آندھرا پر دیش ، بہار ، جھار کھنڈ ، یوپی اور کر ناٹک کے تقریبا دو درجن دینی مدارس اور عصری تعلیمی اداروں کے سر پرست ہیں ۔ المعھد العالی الھند تدریب فی القضاء والافتاء ، پھلواری شریف، پٹنہ کے ٹرسٹی ہیں ۔اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا اور مجلس تحفظ ختم نبوت ،آندھرا پر دیش کے جنرل سکریٹری ہیں ۔

آل انڈیا مسلم پر سنل لا بورڈ کے رکن تا سیسی اور رکن عاملہ ہیں ۔ مجلس علمیہ ،آندھرا پر دیش کے رکن عاملہ ہیں ۔امارت شرعیہ بہار ،اڑیسہ وجھار کھنڈ کی مجلس شوریٰ کے رکن ہیں ،امارت ملت اسلامیہ ،آندھرا پر دیش کے قاضی شریعت اور دائرۃ المعارف الاسلامی ، حیدرآباد کے مجلس علمی کے رکن ہیں ۔ آپ النور تکافل انسورنش کمپنی ، جنوبی افریقہ کے شرعی اایڈوائزر بورڈ کے رکن بھی ہیں ۔
اس کے علاوہ آپ کی ادارت میں سہ ماہی ، بحث ونظر، دہلی نکل رہا ہے جو بر صغیر میں علمی وفقہی میدان میں ایک منفرد مجلہ ہے ۔روز نامہ منصف میں آپ کے کالم ‘‘ شمع فروزاں‘‘ اور ‘‘ شرعی مسائل ‘‘ مسقتل طور پر قارئین کی رہنمائی کر رہے ہیں ۔
الحمد للہ آپ کئی کتابوں کے مصنف ہیں ۔آپ کی تصنیفات میں ،قرآن ایک الہامی کتاب ، 24 آیتیں ، فقہ القرآن ، تر جمہ قرآن مع مختصر تو ضیحات، آسان اصول حدیث، علم اصول حدیث ، قاموس الفقہ ، جدید فقہی مسائل ، عبادات اور جدیدمسائل، اسلام اور جدید معاشرتی مسائل اسلام اور جدید معاشی مسائل اسلام اور جدید میڈیل مسائل ،آسان اصول فقہ ، کتاب الفتاویٰ ( چھ جلدوں میں ) طلاق وتفریق ، اسلام کے اصول قانون ، مسلمانوں وغیر مسلموں کے تعلقات ، حلال وحرام ، اسلام کے نظام عشر وزکوٰۃ ، نئے مسائل، مختصر سیرت ابن ہشام، خطبات بنگلور ، نقوش نبوی،نقوش موعظت ، عصر حاضر کے سماجی مسائل ، دینی وعصری تعلیم۔ مسائل وحل ،راہ اعتدال ، مسلم پرسنل لا ایک نظر میں ، عورت اسلام کے سایہ میں وغیرہ شامل ہیں۔ (مجلۃ العلماء)

کل مواد : 106
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019

تبصرے

يجب أن تكون عضوا لدينا لتتمكن من التعليق

إنشاء حساب

يستغرق التسجيل بضع ثوان فقط

سجل حسابا جديدا

تسجيل الدخول

تملك حسابا مسجّلا بالفعل؟

سجل دخولك الآن
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019