"سھا فیہ" اور "سھا عنہ" دونوں میں کیا فرق ہے؟

کیا اہلِ لغت کے یہاں لفظ "سَهَا" کے صلہ کے متعلق اختلاف ھے کہ وہ "سھا فیہ" اور "سھا عنہ" دونوں سے مراد غفلت لیتے ھیں، جیسا کہ صاحبِ "المعجم الوسيط" نے لیا ھے اور "سھا عنہ" کے معنی "قیل" کے ساتھ بیان کیے ھیں:

" سَهَا عنه، وفيه، سَهَا ُ سَهْوًا ، و سُهُوًّا ، وسَهْوَة: غَفَلَ عنه.
وقيل : سها فيه: تركه عن غير علم ، وسها عنه : تركه مع العلم .
يقال : سها في الصلاة : نَسِيَ شيئًا منها ، وسها عنها : تركها ولم يُصَلِّ .
و سَهَا إليه : نظر ساكنَ الطَّرْف .
فهو ساهٍ ، وسَهْوانُ .
وفي المثل : إن المُوَصَّيْنَ بنو سَهوانَ: إنك لا تحتاج أن تُوصِيَ إلا من كان غافلا ناسِيًا .
المعجم الوسيط

شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019

تبصرے

    • جی نہیں۔ دونوں درست ہیں۔ تاہم دونوں الگ الگ سیاق میں قدرے مختلف معنی میں استعمال ہوتے ہیں جیسے اردو میں بھول چوک یا بھولنا اور چوکنا میں لطیف سا فرق ہے۔ بھولنا گویا سہا فیہ کے ہم معنی ہے اور چوکنا سہا عنہ کے یا اس کے بر عکس۔ تاہم یہ بھی ہر موقع پر چسپاں نہیں ہوگا۔ “سہا عنہ” کا مفہوم ٹھیٹ اردو میں در اصل دانستہ لا پروائی اور بے اعتنائی برتنا ہے۔ جیسا کہ سورہ الماعون میں ارشاد ہے “الذين هم عن صلاتهم ساهون"... مگر اس لطیف معنوی فرق کو ہمارے اکثر اردو مترجمین نہیں سمجھ سکے۔
      واضح رہے کے المعجم الوسیط یا کسی اور عربی لغت میں “قیل” اور “یقال” سے مراد یہ نہیں کہ وہ کوئی ضعیف یا مجروح یا مرجوح قول ہے جسے فقہی کتابوں میں “صیغۂ تمریض” کہا جاتا ہے۔ بلکہ اس کا مقصد صرف متعلقہ لفظ کے بارے میں اہل زبان کے یہاں متداول شواہد استعمال نقل کرنا ہوتا ہے نہ کوئی ترجیحی حکم لگانا۔اس بات کو بھی ہمارے اکثر اردو داں علماء نہیں سمجھ سکے اور اس کے نتیجے میں قرآن و حدیث اور دیگر عربی نصوص کے ترجمے یا ترجمانی میں اکثر چوک گئے ہیں اور انہوں ایسے معانی کو “راجح یا درست” قرار دینے کی کوشش کی ہے جو از روئے لغت نہ راجح ہے نہ درست کیونکہ اس کا تعین سیاق کلام سے ہوتا ہے۔

    • واضح ھوگیا...
      گویا "سھا فیہ" اور "سھا عنہ" دونوں کے معنی اصلا ایک ھی ھیں، یعنی: غفل عنہ.
      تاھم سیاقِ کلام کی بنا پر اس میں لطیف فرق پیدا ھوجائے گا؟
      جیسا کہ کشاف میں ھے:
      ”فإن قلت: أي فرق بين قوله «عن صلاتهم» وبين في صلاتهم؟ قلت: معنى عن: أنهم ساهون عنها سهو ترك لها وقلة التفات إليها.... الخ.
      ومعنى في: أن السهو يعتريهم فيها بوسوسة شيطان أو حديث نفس.“

يجب أن تكون عضوا لدينا لتتمكن من التعليق

إنشاء حساب

يستغرق التسجيل بضع ثوان فقط

سجل حسابا جديدا

تسجيل الدخول

تملك حسابا مسجّلا بالفعل؟

سجل دخولك الآن
ویب سائٹ کا مضمون نگار کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں، اس سائٹ کے مضامین تجارتی مقاصد کے لئے نقل کرنا یا چھاپنا ممنوع ہے، البتہ غیر تجارتی مقاصد کے لیئے ویب سائٹ کا حوالہ دے کر نشر کرنے کی اجازت ہے.
ویب سائٹ میں شامل مواد کے حقوق Creative Commons license CC-BY-NC کے تحت محفوظ ہیں
شبکۃ المدارس الاسلامیۃ 2010 - 2019